Monday, March 19, 2007

Multazim per

ظاہر کی آنکھ سے نہ تماشہ کرے کؤی
ہو دیکھنا تو دیدۂ دل وا کرے کؤی
اور بیٹھے کیا سمجھ کے بھلا طور پر کلیم
طاقت ہو دید کی تو تقاضا کرے کؤی

الہی تیری چوکھٹ پر بھکاری بن کے آیا ہوں
سراپا فقر ہوں عجز و ندامت ساتھ لایا ہوں

بھکاری وہ کے جس کے پاس جھولی ہے نہ پیالہ ہے
بھکاری وہ جسے حرص و حوس نے مار ڈالا ہے

متاع دین و دانش نفس کے ہاتھوں سے لٹوا کر
سکون قلب کی دولت حوس کی بھینٹ چڑھوا کر

لٹا کر ساری پونجی غفلت و اسیان کی دلدل میں
سہارا لینے آیا ہوں ترے کعبے کے آنچل میں

گناہوں کی لپٹ سے کأینات افسردہ
ارادے مذمحل، ہمت شکستہ، حوصلے مردہ

کہاں سے لأوں طاقت دل کی سچی ترجمانی کی
کے اس جھنجھل میں گزری ہیں گھڑیاں اس زندگی کی

خلاصہ یہ کہ بس جل بھن کے اپنی رو سیاہی سے
سراپا فقربن کر اپنی حالت کی تباہی سے

ترے دربار میں لایا ہوں اب اپنی زبوں حالی
تری چوکھٹ کے لأیق ہر عمل سےہاتھ ہیں خالی

یہ تیرا گھر ہے تیرے مہر کا دربار ہے مولا
سراپا نور ہے ایک محبت انوار ہے مولا

تیری چوکھٹ کے جو آداب ہیں میں ان سے خالی ہوں
نہیں جس کو سلیقہ مانگنے کا میں وہ سوالی ہوں

زباں غرق ندامت دل کی ناقص ترجمانی پر
خدایا رحم میرے اس زبان بے زبانی پر

یہ آنکھیں خشک ہیں یا رب انہیں رونا نہیں آتا
سلگھتے داغ ہیں دل میں جنہیں دھونا نہیں آتا


الہی تیری چوکھٹ پر بھکاری بن کے آیا ہوں
سراپا فقر ہوں عجز و ندامت ساتھ لایا ہوں
سراپا فقر ہوں عجز و ندامت ساتھ لایا ہوں

:-:

O my Lord, I come to Your door as a beggar
In complete indigence, bringing only my humility and shame.
A beggar who has neither a joli nor a begging-bowl
A beggar slain by his desires and cravings.

Having squandered the treasure of Deen and intellect
at the hands of the ego;
Having sacrificed contentment of heart at the altar of lust and pleasure
Losing my wealth in the quick-sand of heedlessness and sin
I have come to seek refuge under the covering of your Kaaba.
Through the stains of sin the heart’s world is suffering
Aspirations are weak, the will broken and hope is dead.

From whence should I find the strength to express the heart truly?
For in this snare have I passed every moment of my life
In short, having been burnt at the stake of my own ill-deeds
In abject poverty due to the evil of my state

To you have I brought my ill-stricken fate
Empty-handed of any deed befitting your House.
This House of yours, which is your court of Love and Grace O Lord
Tis wholly Light and the repository of all Lights O Lord

Being completely ignorant of the manners of your Doorstep
A beggar knowing not how to beg
My tongue fails to convey my heart’s feeling
O Lord, have mercy on this wordless speech!

These eyes are dry, O Lord, knowing not how to weep
Festering spots in the heart that can’t be cleansed out.
O my Lord I have come to your door as a beggar
wholly indigent, in abject humility and full of shame.

Poetry by Mufti Taqi Usmani
Translation in English by: Tahir Kayani